Breaking News

اغواء برائے تاوان کا خطرناک سلسلہ

شہر قائد سے اغواء برائے تاوان کا خطرناک سلسلہ شروع ہوگیا۔
 شاہ فیصل کالونی سے دو معصوم بچوں کو اغواء کر لیا گیا
دو بچے ٹیوشن جانے کے لئے نکلے تو وہاں سے اغواء کر لیا گیا شاہ فیصل کالونی کے علاقے حجر آباد سے روحین اور رحیم نامی بچوں کو اغواء کر کے
والدین سے تاوان پانچ کروڑ روپے تاوان وصولی کے لئے فون کیا گیا تاہم پاکستان رینجرز نے کراچی کے علاقے داوّد شودر گوٹھ چوکنڈی میں بھرپور کارروائی کرتے ہوئے۔ مغوی معصوم بچوں کو بازیاب کرا لیا۔ تاہم دوسرے اندوہناک واقعہ میں سوشل میڈیا پر وڈیوز دو وڈیوز وائرل ہوئیں جس میں نوجوان کو ہنی ٹریپ کے ذریعے کراچی سے بلا کر اغواء کر لیا اور زنجیروں میں جکڑ کر بھاری تاوان وصولی کے وڈیوز بنائی گئی۔ دوران وڈیو بناتے ہوئے مسلح افراد تشدد کا نشانہ بھی بناتے رہے اغوا ہونے والے شخص کا تعلق کراچی سے ہے جوکہ صفورہ کا رہائشی ہے مغوی ایک سیکیورٹی کمپنی میں بطور
گارڈ ملازمت کرتا تھا تاہم مبینہ ہنی ٹریپ کا شکارہوکر اغواء کاروں کے چنگل میں پھنس گیا۔ اسی طرح ایک اور شخص جس کا نام جنید قمرسامے آیا ہے اسے 24 ستمبر اندورن سندھ کے علاقے کشموربلا کر اغواء کیا گیا اغواء کاروں کی جانب سے اہلخانہ کو 1 کروڑ تاوان کا فون مغوی کے اہلخانہ کی جانب سے پولیس کو درخواست دے دی گئی
اغواء کاروں کی جانب سے مغوی کی زنجیروں سے بندھی دردناک ویڈیو بھیجی گئی
ویڈیو میں جنید درد سے چیخ چلا رہا ہے۔ اغواء کاروں کا وڈیو بناتے ہوئے مسلسل اصرار تھا کہ اپنے گھر والوں سے بولو کےپیسے بھیجو۔ ایک کروڑ روپے چاہئے۔ مغوی نے روتے ہوئے اپنے والدین سے کہا کہ جو پیسے آپ نے جمع کئے ہیں ان کو دے کر مجھے آزاد کروا لو۔

یہ بھی پڑھیں: محبت و شادی کے نام پر اغواء

جتنے بولو گے بولوں کا ، امی کو بولونگا، مغوی کی دہائی
امی کو بولونگا جتنے پیسے اکھٹے کئے بھیجیں، مغوی
اغواء کاروں کی جانب سے دوسری ویڈیو بھی بھیج دی گئی
دوسری ویڈیو میں مغوی انتہائی خستہ حال ہے
داڑھی بال بڑھ گئے اور کلاشنکوف کی نوک پر تشدد کیا جارہا ہے
میری مدد کرو، اللہ کے نام پر، امی مجھے بچاو، مغوی
میں مر رہا ہوں، خدا کے واسطے مجھے بچاو، مغوی روتا رہا
مبینہ طور پر لڑکی کی آوازاور تصویردکھا کر جنید کو پھنسایا گیا
سکھر تک میرے بیٹے کا مجھ سے رابطہ تھا، والدہ کی درخواست
اغواء کاروں کی جانب سے بیٹے کو تشدد کا نشانہ بنایا جارہا ہے، والدہ
میرے بیٹے کو بازیاب کیا جائے،والدہ کی دہائی
اغواء کاروں کا شکار جنید قمر شادی شدہ تین بچوں کا باپ ہے، والدہ
بیٹے کے اغواء کو دو ماہ ہونے والے ہیں، والدہ
میں کراچی پولیس کے پاس جاتی ہوں تووہ کشمورپولیس کا کہتے ہیں، والدہ
میں کیا کروں کس کے پاس جاکر مقدمہ درج کرواوں، والدہ کی دہائی
شہرقائد سے معصوم بچوں کا اغواء سے شہریوں میں خوف و ہراس پھیل گیا جبکہ ہنی ٹریپ کا شکار ہوکر اغواء کاروں کے چنگل کا شکار ہو جاتے ہیں۔

 

About admin

Check Also

لاپتا شادی شدہ خاتون کا ڈراپ سین

کراچی کے علاقے گلشن حدید سے لاپتا شادی شدہ خاتون کا ڈراپ سین، خاتون مرضی …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *